45

*جھنگ(جاوید اعوان سے) سٹلائیٹ ٹاؤن میں انور پکوان سنٹر کی ناقص اٹے سے بنی مہنگی روٹی اور نان کی فروخت اور سرکاری ٹیکس چوری کی روایت برقرار رکھی فوڈ اتھارٹی اور پرائس کنٹرول مجسٹریٹس خاموش تماشائی نہ جانے کیوں*

*جھنگ(جاوید اعوان سے) سٹلائیٹ ٹاؤن میں انور پکوان سنٹر کی ناقص اٹے سے بنی مہنگی روٹی اور نان کی فروخت اور سرکاری ٹیکس چوری کی روایت برقرار رکھی فوڈ اتھارٹی اور پرائس کنٹرول مجسٹریٹس خاموش تماشائی نہ جانے کیوں*

جھنگ انور پکوان سنٹر سٹلائیٹ ٹاؤن کی انتظامیہ جو کہ انور مارکی ( شادی ہال ) کے مالک بھی ہیں اور جن کے پاس تقریباََ پچاس سے زیادہ ملازم ریگولر کام کرتے ہیں اور ٹیکس چوری کی مد میں آج تک انہوں نے نہ تو کسی اپنے ملازم کا سوشل سیکورٹی کارڈ بنوایا ھے اور نہ ہی ان کا ای .او .بی . آئی کارڈ بنوایا ہے جس وجہ سے انور مارکی اور پکوان سنٹر کے مالکان عرصہ دراز سے ذاتی مالی مفاد کی خاطر سرکاری ٹیکس چوری کے علاوہ اُن غریب ورکرز کا سرکاری فری علاج اور مستقبل میں سرکاری پینشن کا حق بھی ختم کر چُکے ہیں جو کہ کئی سالوں سے ان کے پاس مستقل بُنیادوں پر نوکری کر رہے ہیں اور یہ ان غریب ورکرز کا بُنیادی حق تھا یاد رہے کہ چند دن پہلے بھی انور پکوان سنٹر اور انور مارکی کے مالکان کے خلاف مہنگے داموں نان روٹی فروخت کرنے اور سرکاری ٹیکس چوری کرنے کے الزام میں اخبارات میں خبر چھپی تھی لیکن ایف .بی . آر سوشل سیکورٹی کے اعلیٰ افسران اور ای . او . بی . آئی کے کسی اعلیٰ افیسر نے آج تک کوئی انکوائری آرڈر نہیں کیا اور نہ ہی کسی پرائس کنٹرول مجسٹریٹ نے اس مہنگائی کے خلاف کوئی ایکشن لیا ہے عوامی حلقوں نے وفاقی حکومت اور ایف . بی . آر سمیت پنجاب کے تمام ٹیکس ریکوری کے اداروں کے افسران سے مطالبہ کیا ھے کہ ان سرکاری ٹیکس چوروں اور راتوں رات امیر بننے والے لُٹیروں اور غریب ورکرز کی مسلسل حق تلفی کرنے والے انور پکوان سنٹر اور انور مارکی کے مالکان کے خلاف فوری کاروائی عمل میں لا کر مصنوعی مہنگائی کرنے سے روکا جائے اور ان کو سرکاری ریٹ پر نان روٹی فروخت کرنے کا پابند بنانے کے علاوہ ان سے لاکھوں روپے کی سرکاری چوری شُدہ ٹیکس کی ریکوری بھی کی جائے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں