58

جھنگ (محمد جاوید اعوان) ڈی ایس پی ٹریفک جھنگ خالد قریشی کے لالچ نے ضلع جھنگ کے لاکھوں افراد کو اذیت میں ڈال دیا مزید تفصیلات کے لیے لنک پر کلک کریں

جھنگ (محمد جاوید اعوان) ڈی ایس پی ٹریفک جھنگ خالد قریشی کے لالچ نے ضلع جھنگ کے لاکھوں افراد کو اذیت میں ڈال دیا مزید تفصیلات کے لیے لنک پر کلک کریں روزانہ سفر کرنے والے مریض بزرگ بچے عورتیں ذلیل و خوار شوگر ملز کی جانب سے ملنے والے پیکج نے ڈی ایس پی ٹریفک جھنگ کی آنکھوں پر پٹی باندھ دی کوئی آفیسر بھی سننے کو تیار نہیں گنے کی ٹرالی جو ہمیشہ رات کو گزاری جاتی تھی۔مگر ڈی ایس پی ٹریفک نے اٹھارہ ہزاری کی طرف قائم شوگر ملز سے ماہانہ لاکھوں کی ڈیل اور لگٹرثری کار تحفہ میں لی اور ٹرالیوں کو چوبیس گھنٹے گزارنے کی اجازت دے دی جس سے بھکر لیہ خوشاب کوٹ شاکر مظفر گڑھ ڈیرہ غازی خان ڈیرہ اسماعیل خان احمد پور سیال گڑھ مہاراجہ اور تحصیل اٹھارہ ہزاری اور احمد پور سیال کی رہائشی عوام عجیب اذیت کا شکار ہے مگر اعلی حکام کے نوٹس میں دینے کے باوجود کوئی اثر نہ ہے اور ہیڈ تریموں سے چوبیس گھنٹے ٹرالیاں جاری ہیں۔جس سے ہر وقت ٹریفک جام ہوتی ہے پہلے ہمیشہ رات کے اوقات کئی سالوں سے چل رہا ہے سسٹم اب جب جھنگ والی ملز بھی چل پڑی ہیں تو ادھر سے گنا ادھر آتا ہے اور ادھر سے ادھر جاتا ہے جس سے صورتحال مزید گھمبیر ہوچکی ہے اور مخلوق خدا تکلیف سے تڑپ رہی ہے مگر کوئی اثر نہیں ڈی ایس پی ٹریفک پہلے ہی گاڑیوں کو فیول کی مد میں اور بوگس چالان بک کی آڑ میں میں بھی کرپشن میں ملوث ہے اور ساتھ یہ اذیت گلے ڈال دی وارڈنز نے نام نہ ظاہر کرنے پر بتایا کہ ہمیں گاڑیوں موٹر سائیکل کا فیول مطلوبہ کی بجائے چوتھا حصہ دیا جاتا ہے ہم کہاں سے پٹرولنگ کرینگے جبکہ شوگر ملز سے ڈیل کے بعد ڈی ایس پی نے زیادہ افسران اہلکاروں کو اٹھارہ ہزاری درگاہی شاہ ہیڈ تریموں مہلوانہ لگا دیا اور سارا فوکس وہی ہے جبکہ جھنگ میں بہت ضرورت ہے ہم تو حکم کے غلام ہیں جبکہ بوگس چالان بک بھی عام ہے خاص کر ہفتہ والے دن جب مہلوانہ موڑ مویشی منڈی لگتی ہے تو پورے ملک سے آنے والے لوگوں کو جعلی چالان بک کی آڑ میں لوٹا جاتا یے اور اس دن مویشی منڈی آنے اور جانے والوں پر ڈیوٹی لگوانے والوں سے ایک دن کا ڈی ایس پی فی پوائنٹ پچاس ہزار روپے لیتا ہے آئی جی پنجاب ڈی آئی جی ٹریفک پنجاب اور ڈی پی او جھنگ سے جھنگ کی عوام نے مطالبہ کیا کہ ڈی ایس پی اعلانیہ کہتا ہے کہ میں اوپر حصہ دیتا ہے کوئی نہیں پوچھ سکتا کیا عوام کو ستانے والے ڈی ایس پی ٹریفک کے خلاف ایکشن ہوگا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں