28

محکمہ پاک پی ڈبلیو ڈی کی جھنگ میں ڈویلپمنٹ اسکیموں میں ناقص میٹریل کے استعمال اور اعلیٰ سطحی کرپشن کے انکشافات ذرائع مزید تفصیلات کے لیے لنک پر کلک کریں

محکمہ پاک پی ڈبلیو ڈی کی جھنگ میں ڈویلپمنٹ اسکیموں میں ناقص میٹریل کے استعمال اور اعلیٰ سطحی کرپشن کے انکشافات ذرائع مزید تفصیلات کے لیے لنک پر کلک کریں
جھنگ(محمد جاوید اعوان) محکمہ پاک پی ڈبلیو ڈی کی جھنگ میں ڈویلپمنٹ اسکیموں میں ناقص میٹریل کے استعمال اور اعلیٰ سطحی کرپشن کے انکشافات ذرائع بتا رھے ہیں کہ مندرجہ بالا محکمہ فیڈرل گورنمنٹ کا ادارہ ھے اور اسکے افسران اور اہلکاروں کا موقف ھے کہ ھمیں پنجاب کا کوئی محکمہ پوچھ نہیں سکتا ھے گزشتہ مالی سال میں جو کہ 30 جون 2022 کو اختتام پذیر ھو گیا ھے اس محمکہ نے ضلع جھنگ میں کروڑوں روپے کے کام کروائے ہیں جن میں گلیوں میں نالی سولنگ اور نالے شامل ہیں مزید برآں پکی روڈز اور پی سی سی روڈز بھی شامل ہیں جن میں انتہائی ناقص اور گھٹیا قسم کا میٹریل بے دریخ استعمال کیا گیا ھے اس محکمے کا دفتر تو جھنگ میں ھے مگر اس کے انچارج ایگزیکٹو انجینئر کے دائرہ کار میں ضلع بھکر اور لیہ بھی شامل ہیں موصوف ایگزیکٹو انجینئر عمر رسیدہ اور ریٹائرمنٹ کے قریب ہیں اور اکثر اوقات میٹنگ کے بہانے اپنے گھر لاھور ھی رہتے ہیں اور دفتر کا سارا کام دفتر کے اہلکار لاھور سے ھی کروا کر لاتے ہیں
اس محکمہ کی زیر نگرانی ھونے والے کاموں کے ناقص ھونے کی کئی وجوہات ہیں دفتر ھذا کے ایک اہلکار نے نام نہ شائع کرنے کی شرط پر بتایا ھے کہ کوئی بھی کام شروع کرنے سے پہلے اسکیم کا 12 فیصد تو MNA کو دینا پڑتا ھے اسکے بغیر ٹھیکیدار کو ورک آرڈر ھی جاری نہیں ھوتا ھے جب ورک آرڈر جاری ھو جاتا ھے تو اوپر سے فون کال ا جاتی ھے کہ فلاں ٹھیکیدار کلیر ھو گیا ھے اس کو اتنی پیمنٹ کر دیں جو کہ بغیر کام شروع کیے ھی ٹھیکیدار کو دفتر کے افسران اور اہلکار اپنا کمیشن ایڈوانس لے کر پیمنٹ کر دیتے ہیں اس پورے دفتر کو عمر دراز نامی سب انجینئر نے یرغمال بنایا ھوا ھے اس کے بغیر دفتر ھذا میں پتہ نہیں ہل سکتا کیونکہ عمرداز مقامی ھے اور مختلف MNA کے فرنٹ مین کا کردار بھی ادا کرتا ھے جھنگ سب ڈویژن کے SDO شاھد کو دفتر میں کوئی پوچھتا بھی نہیں ھے کیونکہ وہ جھنگ کی مقامی نہیں ہیں اس لیے وہ دفتر بھی کم کم ھی آتے ہیں میڈیا ٹیم نے جب اس محکمہ کی زیر نگرانی ھونے والے کاموں جھنگ اور گردونواح میں سروے کیا تو کئی قسم کے انکشافات ھوئے جن میں کام کے بغیر پیمنٹس کسی اور محکمے کے کیے گئے کام کی پیمنٹ اور ٹھیکیدار کے پیمنٹ لے کر کام ادھورے چھوڑ جانے انکشافات بھی ھوئے ہیں اس تناظر میں عوامی اور سماجی حلقوں نے وزیر اعظم پاکستان میاں محمد شہباز شریف چیئرمین نیب پاکستان وفاقی وزیر برائے تعمیرات ڈائریکٹر جنرل پاک پی ڈبلیو ڈی ڈیپارٹمنٹ اور ڈائریکٹر جنرل ایف آئی اے ڈائریکٹر ایف آئی اے ڈپٹی ڈائریکٹر ایف آئی اے فیصل آباد ڈویژن سے اپیل کی ھے کہ ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی تشکیل دی جائے اور محکمہ پاک پی ڈبلیو ڈی جھنگ محمکہ لوکل گورنمنٹ جھنگ اور ضلع/تحصیل کونسل جھنگ کے زیرِ نگرانی ھونے والے ( مالی سال 2021..22) تمام تعمیراتی کاموں کا ریکارڈ ایک جگہ اکٹھا کر کے انکوائری کی جائے تو اور بھی بے شمار انکشافات متوقع ہیں اس سلسلے میں موقف کے لیے جب دفتر پاک پی ڈبلیو ڈی جھنگ رابطہ کیا گیا تو ایکس ای این حسب روایت میٹنگ پر جھنگ سے باہر تھے ایس ڈی او شاھد بھی دفتر موجود نہ تھے اور عمر دراز سب انجینئر کا موبائل نمبر بھی بند تھا
عوامی اور سماجی حلقوں نے احمد کمال مان ڈپٹی کمشنر جھنگ سے بھی اپیل کی ھے کہ جھنگ میں ھونے والے کاموں کی انکوائری کروائیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں