22

اسلام آباد: چیف جسٹس نے عمران خان توہین عدالت کیس کی سماعت کے دوران اعظم سواتی سے مکالمہ کیا کہ آپ کے ساتھ جو ھوا بہت درد ناک ھے۔مذید تفصیلات کے لیے لنک پر کلک کریں

اسلام آباد: چیف جسٹس نے عمران خان توہین عدالت کیس کی سماعت کے دوران اعظم سواتی سے مکالمہ کیا کہ آپ کے ساتھ جو ھوا بہت درد ناک ھے۔مذید تفصیلات کے لیے لنک پر کلک کریں

سپریم کورٹ میں چیف جسٹس پاکستان جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں عمران کے خلاف توہین عدالت کیس کی سماعت ہوئی جب کہ اس دوران پی ٹی آئی سینیٹر اعظم سواتی بھی عدالت میں پیش ہوئے۔

چیف جسٹس نے اعظم سواتی سے مکالمہ کیا کہ آپ کے ساتھ جو ہوا بہت دردناک ہے، آپ کا کیس ایچ آر سیل میں ہے، عدالت اس معاملے میں محتاط ہے،کیس کو قانون کے مطابق دیکھیں گے
چیف جسٹس نے مکالمہ کیا کہ آپ کبھی سپریم کورٹ کے ریسٹ ہاؤس میں نہیں ٹھہرے، اس پر اعظم سواتی نے جواب دیا کہ جی آپ ٹھیک کہہ رھے ہیں، میں کوئٹہ فیڈرل لاج میں ٹھہرا تھا۔

اس موقع پر اعظم سواتی نے سوال کیا کہ کیا میں مبینہ ویڈیو آپ ججزکے علاوہ کسی کو دکھا سکتا ہوں؟ اس پر چیف جسٹس نے کہا کہ پیمرا اور پی ٹی اے کو مبینہ ویڈیو ہٹانے کا حکم دے دیتے ہیں، اس پر پی ٹی آئی رہنما کا کہنا تھا کہ ہوسکتا ہے جو ویڈیو ہٹائی جائے وہ ویڈیو نہ ہو جو مجھے بھیجی گئی۔

دوران سماعت چیف جسٹس نے ارشد شریف قتل کیس کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ ارشد شریف کے قتل پر ان کی والدہ کے خط پربھی ایچ آر سیل تحقیق کررہا ہے، قتل پرفیکٹ فائنڈنگ کمیشن کی رپورٹ کو دیکھیں گے، تحقیقاتی کمیشن معاملے کی تحقیق کیلئے کینیا گیا تھا، اس کمیشن سے رپورٹ منگوا رہے ہیں، سپریم کورٹ خود تحقیقات نہیں کرسکتی، پہلے مواد آجائے پھر معاونت میں آسانی ہوگی، مواد کے بغیر تو عدالت ادھر ادھر سر مارتی رھے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں