86

ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال جھنگ کے اندر گھاس پھوس کو لگای جانے والی آگ جس سے ماحول تو آلودہ ہوہی رہا ہے ساتھ ساتھ ہسپتال میں آنے والےمریضوں خاص کر سانس کی بیمارہوں میں مبتلا مریضوں کےلیے بہت تکلیف دہ ھے

ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال جھنگ کے اندر گھاس پھوس کو لگای جانے والی آگ جس سے ماحول تو آلودہ ہوہی رہا ہے ساتھ ساتھ ہسپتال میں آنے والےمریضوں خاص کر سانس کی بیمارہوں میں مبتلا مریضوں کےلیے بہت تکلیف دہ ھے
جھنگ (محمد جاوید اعوان)ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال جھنگ کے اندر گھاس پھوس کو لگائی جانے والی آگ جس سے ماحول تو آلودہ ہوہی رہا ہے ساتھ ساتھ ہسپتال میں آنے والےمریضوں خاص کر سانس کی بیمارہوں میں مبتلا مریضوں کےلیے بہت تکلیف دہ ھے
ہسپتال کہ اندر آنے والے مریضوں کا ایم ایس ہسپتال الطاف بھوانہ جن کے پاس اب سی ای او ہیلتھ اتھارٹی کا آضافی چارج بھی ہے سے سوال کر رہے ہیں کہ جو ادارہ صحت کے معیار کو بہتر بنانے کا ذمہ دار ہے اسی ادارہ کی اپنی عمارت کے گارڈن میں گھاس پھوس اور کوڑا کرکٹ کو آگ لگا دی جاے جو کہ غیر قانونی ھے اور سنگین جرم ہے جو کہ محکمہ ہیلتھ کہ اپنے گھر میں انجام دیا جا رہا سرکار کی جانب سے جگہ جگہ لکھ کر لگایا جاتا ہے کہ کوڑا کرکٹ اور گھاس پھوس کو آگ لگانا جرم ہے اور یہ جرم اپنے ہی محکمہ کے اندر سر عام کیا جارہا ہے عوام نے وزیر اعظم عمران خان جو کہ کلین اینڈ گرین پاکستان کے خواہاں ہیں سے مطالبہ کیا ہے کہ ایسے ماحول دشمن اقدامات کا نوٹس لیں اور اس پر سخت سزایں دلوایں اور ساتھ ساتھ ایم ایس اور سی ای او ہیلتھ الطاف بھوانہ اور ڈی ایچ او جھنگ سب سے اہم ڈی سی جھنگ سے بھی مطالبہ کرتےہیں کہ آپ نے تو ایسے واقعات کو روکنا ہے آپ تو معیاری طبعی سہولیات دینے کے دعویدار ہیں اور اپنے زیر سایہ یہ جرم پروان چڑھ رہا ہے ایسے اقدامات کو ہسپتال اور باقی شہر کے اندر بھی روکا جاے تاکہ ماحولیاتی آلودگی سے بچا جا سکے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں