19

جھنگ میں گندم کی بوائی کے وقت منافع خوروں نے مارکیٹ سے کھادیں غائب کر دی یوریا مکمل غائب بیس دن بعد ضرورت پڑنے پر ڈی اے پی نائٹرو کی طرح بلیک کرینگے

جھنگ میں گندم کی بوائی کے وقت منافع خوروں نے مارکیٹ سے کھادیں غائب کر دی یوریا مکمل غائب بیس دن بعد ضرورت پڑنے پر ڈی اے پی نائٹرو کی طرح بلیک کرینگے

جھنگ(محمد جاوید اعوان) گندم کی بوائی کے وقت منافع خوروں نے مارکیٹ سے کھادیں غائب کر دیں یوریا مکمل غائب بیس دن بعد ضرورت پڑنے پر ڈی اے پی نائٹرو کی طرح بلیک کرینگے
3000 تک یوریا فروخت کا پلان محکمہ زراعت معصوم محکمہ بن کر اپنا حصہ وصول کرنے لگا انتطامیہ کی صرف باتیں شکر گنج ملز میں پکڑے گئے لاکھوں گٹو کی پبلسٹی تو کسی فلم کی طرح کی گئی لیکن آخر پر کوئی رزلٹ نہ آیا کسان کھاد کے لیے مارے مارے پھرنے لگے انتظامیہ کی کمزوری سامنے آگئی 8200 روپے والی ڈی اے پی 9500 میں فروخت 3800 والی نائٹرو 6000 میں فروخت ہورہی ہے محکمہ زراعت کے آفیسر کھاد ڈیلروں سے مکمل ساز باز ہیں اور انتظامیہ کو صرف لالی پوپ دے رہے ہیں محکمہ زراعت کے آفیسر یملے مملے بن کر عملوں کے پورے ہیں اور باقاعدہ حصہ لے رہے ہیں جبکہ اسسٹنٹ کمشنر جھنگ کے چھاپوں کے بعد مارکیٹ سے کھاد غاٙئب ہے یوریا 3000 تک بھی نہیں مل رہا اس وقت ذخیرہ اندوزوں نے مخلتف رائس ملز فلور ملز اور خفیہ گوداموں۔میں چھپا رکھی ہے وہ نظر نہیں آرہی اور گندم کے سیزن میں کسانوں کی پچاس من گندم بھی متعلقہ اسسٹنٹ کمشنر کو نظر آجاتی ہے اور اب کھاد چھپی نظر نہیں آ رھی شہر میں اسسٹنٹ کمشنر کا ڈالہ صرف سڑکوں پر گھومتا نظر آرہا ہے عملی طور پر کوئی کاروائی نہ ہے چار روز قبل اسسٹنٹ کمشنر نے لاکھوں تھیلہ کھاد پکڑی میڈیا پر دی کہ سرکاری قیمت پر کسانوں کو دی جائے گی لیکن نہ جانے وہ کھاد کہاں گئی کوئی ڈیل ہوگئی یا وہ کھاد کہاں گئی یا کسانوں کو گندم کاشت ہونے کے بعد ملے گی ڈپٹی کمشنر جھنگ نے کل زراعت کے دفتر کا دورہ کیا ڈیلروں سے ملاقات اور ڈیلروں کی یقین دہانی پر کہ کھاد ملے گی لیکن اس کے باوجود ڈی اے پی اور نائٹر بلیک میں فروخت ہوری ہے جبکہ یوریا بالکل نہیں مل رہی جبکہ واپڈہ اور شوگر ملز پر پریشر ڈال کر کام نکلوانے والی کسان تنظیمیں بھی کھاد کی بلیک فروخت پر مکمل خاموش ہیں ہردلعزیز ڈپٹی کمشنر جھنگ سے مطالبہ کیا دوسرے اضلاع میں کوئی زیادہ ایشو نہ ہے جھنگ میں عجیب سی صورتحال ہے اور کھاد کی سرکاری قیمت پر فروخت یقینی بنائی جائے جبکہ رائس ملز فلور ملز اور دیگر خفیہ گوداموں میں چھپائی گئی ذخیرہ اندوزوں کی کھاد نکالی جائے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں