40

وہاڑی (نمائندہ سٹی ون نیوز) ڈسٹرکٹ بار کی سینئر ممبر میڈم ثریا بشیر قصوری ایڈوکیٹ نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مزید تفصیلات کے لیے لنک پر کلک کریں

وہاڑی (نمائندہ سٹی ون نیوز) ڈسٹرکٹ بار کی سینئر ممبر میڈم ثریا بشیر قصوری ایڈوکیٹ نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مزید تفصیلات کے لیے لنک پر کلک کریں
کے پنجاب کے 20 حلقوں میں ہونے والے ضمنی الیکشن میں پی ٹی آٸی کے امیدواروں کی تاریخی کامیابی سے ثابت ہو گیا ہے کہ اب عوام باشعورہیں جس نے تمام تر ہتھکنڈوں اورریاستی مشینری کے استعمال کے باوجود ضمیر فروش سیاستدانوں کو مسترد کر دیا جو پی ٹی آٸی مخالف پارٹیوں جماعتوں کے اتحاد کی آئندہ کی سیاست کے لیے خطرے کی گھنٹی سے کم نہیں اوراب دھونس دھاندلی اورریاستی طاقت کے زریعے عوام کا مینڈیٹ نہیں چرایا جا سکتا۔ تفصیلات کے مطابق وہاڑی ڈسٹرکٹ بار کی سینیئر ممبر میڈم ثریا بشیر قصوری ایڈووکیٹ ہاٸی کورٹ نے کہا کہ گزشتہ کئی ہفتوں سے جاری قیاس آرائیوں کا بالآخرخاتمہ ہوا اورمنحرف ارکان کی سیٹوں پر ہونے ضمنی الیکشن میں عوام نے حکومت اواتحادی جماعتوں کے بیانیہ کو یکسر مسترد کر دیا اور عمران خان کے بیانیہ کوپزیراٸی دی انہوں نے مزید کہا کہ پی ٹی آٸی کی حالیہ شاندار کامیابی مخالف حکومتی اور اتحادی جماعتوں اور مسلم لیگ ن کی آئندہ کی سیاست کا بوریا بستر گول کردیا۔ انہوں نے کہا کہ منحرف ارکان اسمبلی کی خالی کردہ بیس سیٹوں پرہونے والے ضمنی الیکشن میں پی ٹی آئی کی کارکردگی نے مخالف جماعتوں کے لیے مشکلات پیدا کرے گی۔عوام نے نون لیگ اوراس کے اتحادیوں کو یکسرپچھاڑ کے رکھ دیا جو اس بات کی واضح دلیل ہے کہ عوام اب برادری ازم اور روایتی سیاست سے نکل کر نظریات کی سیاست پر منتقل ہونا شروع ہوگئی ہے جوخوش آئند بھی ہے اور ان سیاسی جماعتوں کے لیے لمحہ فکریہ ہے۔پی ٹی آئی کے دوستوں، جیتے ہووے عوامی نمائندوں اورکارکنان کو مبارکباد کے ساتھ ساتھ اب یہ پیغام بھی ملا ہے کہ عمران خان نے جو عوام میں شعور بیدار کیا ہےوہ کسی بھی وقت کسی بھی پارٹی کاتختہ الٹ سکتا ہے۔انہوں نے کہاایک بات تو واضح ہے کہ اس بات کا کریڈٹ واقعی عمران خان کو جاتا ہے کہ عمران خان نے پاکستانی سیاست کوبرادری ازم کی سیاست سے نکال کر نظریاتی سیاست کی پٹڑی پرچڑھا دیا ہے جس سے صرف عوام کی ترجمانی کرنے والے نمائندے ہی میدان میں آ کر معرکہ سرکر سکیں گے۔عمران خان واحد لیڈر ہے جس نے ضمنی انتخابات میں اپنے موقف کو عوام تک پہنچایا اورتمام جماعتوں کےاتحاد،حکومتی مشینری کا بے دریغ استعمال، بکاومیڈیا کےپروپیگنڈہ اوردیگر کئی عوامل کے باوجود پی ٹی آئی نے عمران خان کی قیادت میں حیران کن کامیابی حاصل کی جو یقینا حکومت اوراتحادیوں کے لئے لمحہ فکریہ بن چکی ہے۔ ضمنی انتخابات میں آنے والا رزلٹ عوام کے غم و غصے کا عملی مظاہرہ تھا۔ضمنی انتخابات میں اتنا زیادہ لوگوں کا حق رائے دہی استعمال کرنا خوش آئند بھی ہے اوروقت کی ضرورت بھی۔ عوامی نمائندوں کو عوام کی امنگوں کی ترجمانی کرنا پڑے گی#

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں