20

اٹھارہ ہزاری(تحصیل رپورٹر)پوسٹ آفس اٹھارہ ہزاری مسائل کاشکار،50سال گزرگئےتاحال سرکاری بلڈنگ میسرنہ آسکی،خالی آسامیوں کےپرنہ ہونےسےعملہ کو مشکلات کاسامنا،سیکورٹی کےانتظامات بھی موجودنہیں

اٹھارہ ہزاری(تحصیل رپورٹر)پوسٹ آفس اٹھارہ ہزاری مسائل کاشکار،50سال گزرگئےتاحال سرکاری بلڈنگ میسرنہ آسکی،خالی آسامیوں کےپرنہ ہونےسےعملہ کو مشکلات کاسامنا،سیکورٹی کےانتظامات بھی موجودنہیں۔تفصیلات کےمطابق پوسٹ آفس اٹھارہ ہزاری کوقائم ھوئےتقریباپچاس سال کاعرصہ ھوچکاھےجہاں لاکھوں روپےکاہرروزلین دین کیاجاتاھےلیکن تاحال اس کیلئےسرکاری بلڈنگ کاانتظام نہ ھوسکاھے،ڈاکخانہ کی ذاتی بلڈنگ نہ ھونےکےباعث متعدد بار اس کو پرائیوٹ عمارات میں شفٹ کیاجاچکاھےاوراب بھی بھکرروڈپرموجودایک مارکیٹ میں دوکان کرایہ پرحاصل کرکےکام چلایاجارہاھے،بتایاگیاکہ شہری علاقہ کی پوسٹ مین اورکلرک کی سیٹ بھی عرصہ سےخالی پڑی ھےجس سےملازمین کوفرائض کی ادائیگی میں مشکلات کاسامنا ہےاسکےعلاوہ سیکیورٹی کیلئےبھی کوئی انتظام، گارڈوغیرہ موجودنہیں جس سےواردات کاخوف بھی موجودرہتاہے،اس صورت حال پرعوامی وسماجی حلقوں نےمتعلقہ اعلی حکام فوری نوٹس لینےکامطالبہ کیاہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں