27

جرمنی سے قطر … غلاظت سے طہارت تک*اوریا مقبول جان

*جرمنی سے قطر … غلاظت سے طہارت تک*اوریا مقبول جان

یہ جرمنی کا شہر کولون تھا جہاں 2006ء کے فٹ بال ورلڈ کپ کی رونقیں برپا تھیں۔ اس ورلڈ کپ کے کھلاڑیوں اور تماشائیوں کے حُسنِ ذوق اور تسکینِ تعیش کے لئے دنیا بھر سے ہر رنگ، عمر، نسل اور جسمانی تناسب والی خواتین لائی گئیں۔ ان کی تعداد تقریباً چالیس ہزار تھی۔ ان سمگل شدہ جسم فروش عورتوں سے کولون شہر کے بیچوں بیچ ایک بارہ منزلہ قحبہ خانہ یا جسم فروشی کا اڈہ (Brothel) آباد کیا گیا، جس کا نام پاشچا (Pascha) تھا۔ اس قحبہ خانے کا شاندار افتتاح ورلڈ کپ کے آغاز والے دن 9 جون 2006ء کو کیا گیا۔ اس جسم فروشی کے پلازہ میں دنیا بھر کے ممالک سے 120 جسم فروش عورتیں لا کر بڑے بڑے شیشوں والے ہال میں سجائی گئیں۔ یہ صرف ایک شہر کے ایک اڈے کی بات ہے جبکہ پورے ملک میں چالیس ہزار سمگل شدہ عورتوں سے جرمنی کا ہر وہ شہر آباد کیا گیا جہاں فٹ بال ورلڈ کپ میں شریک بتیس ٹیمیں حصہ لینے جا رہی تھیں۔ ’’پاشچا‘‘ نے اپنے اس قحبہ خانے پر ان تمام ٹیموں کے ممالک کے پرچم بھی لگا رکھے تھے اور اس کے ساتھ ساتھ دیگر عورتوں کے ہمراہ ایک حجاب والی خاتون کا بھی پوسٹر چسپاں کیا تھا۔ اس کے خلاف ایک دن تیس کے قریب مسلمان نوجوان جو چاقوئوں اور ڈنڈوں سے مسلح تھے، احتجاج کرتے ہوئے آئے، جن سے خوفزدہ ہو کر قحبہ خانے کی انتظامیہ نے سعودی عرب اور ایران کے جھنڈوں کو سیاہ کر دیا کیونکہ ان پر کلمۂ طیبہ اور اللہ کا نام لکھا ہوا تھا اور ساتھ ہی حجاب والی عورت کا پوسٹر بھی اُتار دیا۔ جرمنی میں فٹ بال کے کھلاڑیوں اور تماشائیوں کے لئے اتنے بڑے پیمانے پر جسم فروش عورتوں کی سمگلنگ کا خصوصی اہتمام ایک ایسا واقعہ تھا جس نے پوری دنیا کو ہلا کر رکھ دیا۔ مہذب کہلانے والی مغربی دنیا جو انسانی سمگلنگ پر دیگر کمزور ممالک کا معاشی مقاطعہ تک کرتی ہے، وہ کیسے اپنی عیش پسندی اور جنسی خواہشات کی تسکین کے لئے دنیا بھر کی عورتوں کو بلا کر ایک ماہ کے لئے بازار سجاتی ہے۔ اس واقعے کے بعد پوری دنیا میں کھیلوں کے عالمی مقابلوں اور جسم فروشی کے بازاروں کے تعلق پر لاتعداد علمی تحقیقات شروع ہوئیں، یہاں تک کہ امریکہ کی یونیورسٹی آف نبراسکا (Nebraska) نے اس باہمی تعلق پر ایک عالمی کانفرنس بلائی جس میں امریکہ کے ایوانِ نمائندگان کی عالمی تعلقات کی کمیٹی کی ایک تفصیلی رپورٹ پیش کی گئی جس کا عنوان تھا: “Germany’s World Cup Brothels: 40,000 Women and Children at Risk of Exploitation Through Trafficking.” ’’جرمنی ورلڈ کپ کے جسم فروشی کے اڈے: چالیس ہزار عورتیں اور بچے انسانی سمگلنگ کی وجہ سے استحصال کے خطرے میں‘‘۔ اس کے علاوہ نارتھ ویسٹرن یونیورسٹی (Northwestern University) کے سکول آف لاء کے سنجیدہ میگزین میں 2008ء میں اینی میری ٹیولا (Anne Marie Tavella)نے جرمنی کے اس فٹ بال ٹورنامنٹ میں جنسی سمگلنگ (Sex Trafficking) کو بنیاد بنا کر دنیا بھر میں منعقد ہونے والے کھیلوں کے مقابلوں کا جنسی سمگلنگ کے ساتھ تعلق کا جائزہ لیا اور وہ اس قدر بھیانک نتائج سامنے لائی کہ جن کے مطابق کھیلوں کے یہ بڑے بڑے معرکے جب کسی ملک میں سجائے جاتے ہیں تو جہاں ہوٹل اور ٹورازم انڈسٹری کی چاندی ہوتی ہے وہاں نہ صرف یہ کہ اس ملک میں موجود جسم فروش عورتوں کا کاروبار چمکتا ہے بلکہ دنیا بھر سے عورتوں کو وہاں لانے کے لئے جنسی سمگلنگ کا دھندہ بھی خوب چلتا ہے۔ اس رپورٹ میں یہ خوفناک انکشاف بھی ہوا کہ یورپ کے پانچ ممالک ایسے ہیں جہاں سارا سال دنیا بھر سے عورتیں جسم فروشی کے لئے سمگل کر کے لائی جاتی ہیں۔ صرف 1990ء میں تین لاکھ کم عمر بچیاں یورپ کے ممالک میں جسم فروشی کے لئے دیگر علاقوں سے سمگل کی گئیں۔ اسی رپورٹ نے بتایا کہ جرمنی میں ہر سال اوسطاً ایک ہزار لڑکیاں جسمانی تسکین کے لئے لائی جاتی ہیں۔ جرمنی میں جسم فروشی کے کاروبار سے سالانہ 19 ارب ڈالر کی آمدن ہوتی ہے۔ جرمنی کے اس ورلڈ کپ میں ان چالیس ہزار عورتوں کی آمد کی خبر نے دنیا کو چونکا دیا لیکن اس کے باوجود 2008ء میں چین میں اولمپک اور 2010ء میں جنوبی افریقہ میں ورلڈ کپ ہوا مگر ان دونوں مقابلوں میں بھی ویسے ہی بازار سجے، جسم فروشی ہوئی۔ لیکن اب اس کا ڈھنگ اور طور طریقہ ایسا کیا گیا کہ یہ میڈیا میں رپورٹ نہ ہو سکے۔ یہ الگ بات ہے کہ دنیا بھر کے تحقیقی مقالہ نگاروں نے 2006ء سے اب تک کھیلوں کے ہر بڑے ٹورنامنٹ میں اس غلاظت کے بارے میں باقاعدہ اعداد و شمار پیش کئے۔ قطر میں 2022ء کے ورلڈ کپ کا آغاز ہو چکا ہے۔ اس عالمی معرکے کیلئے یوں تو تیاری کئی سال سے جاری تھی اور لاتعداد پلازے اور ہوٹل تعمیر ہو رہے تھے، لیکن قطر کے حکمرانوں نے جس طرح 57 اسلامی ممالک میں ایک اسلامی ملک کی حیثیت سے اپنی شناخت کو منوایا ہے اور جس طرح اس عالمی مقابلے کو شراب و شباب سے پاک کیا ہے اس کی مثال اسلامی دنیا میں نہیں ملتی۔ پڑوس میں دبئی ہے جس میں اگر ایسی کوئی تقریب نہ بھی ہو پھر بھی آپ کو وہاں ہر سامانِ تعیش میسر آئے گا، یہاں تک کہ ایئر پورٹ میں کھانوں کی سجی میز کے بیچوں بیچ ’’لحم الخنزیر‘‘ یعنی سؤر کا گوشت کی چِٹ بھی نظر آئے گی۔ اس کے بالکل برعکس قطر میں فٹ بال کے اس ٹورنامنٹ میں پہلا اہم حکم نامہ 13 اپریل 2022ء کو سکیورٹی کے سربراہ عبداللہ النصری نے اس وقت جاری کیا جب اسے کہا گیا کہ سٹیڈیم میں ایک سٹینڈ ہم جنس پرستوں (LGBT) کے لئے بھی مخصوص کیا جائے اور وہاں ان کا پرچم لہرایا جائے۔ النصری نے انکار کر دیا جس پر انگلینڈ کی مشہور ٹیم “Three Loins” نے بائیکاٹ کا اعلان کیا۔ جس پر قطر کی حکومت نے جواب دیا کہ آپ نے اگر ہم جنس پرستی کا پرچار کرنا ہے تو اس معاشرے میں جا کر کریں جہاں یہ قابلِ قبول ہے۔ آپ قطر میں ایسا کر کے پورے معاشرے کی توہین نہیں کر سکتے۔ اگر کسی نے سٹیڈیم میں ہم جنس پرستی کا جھنڈا لانے کی کوشش کی تو ہم اس سے جھنڈا چھین لیں گے۔ کیونکہ ہمیں ڈر ہے کہ دیکھنے والے غصے میں اس پر حملہ نہ کر دیں۔ ٹورنامنٹ کے آغاز تک ’’فیفا‘‘ کے منتظمین اور قطر کی حکومت کے درمیان بحث چلتی رہی کہ ورلڈ کپ کے دوران شراب کی خریدوفروخت ہو سکتی ہے۔ لیکن کل قطر کی حکومت نے عین آغاز سے ایک دن پہلے یہ فیصلہ کیا ہے کہ ٹورنامنٹ کے دوران جو مشروبات بھی بیچے جائیں گے ان میں ’’الکحل‘‘ نہیں ہو گی۔ یہ خبر اس وقت نشر ہوئی جب ہزاروں شائقین اپنی پروازوں کے ذریعے قطر پہنچ چکے تھے۔ میکسیکو کے سات نوجوان بیئر کے ڈبے پکڑ کر سٹیڈیم میں داخل ہوئے (جو وہ اپنے ساتھ میکسیکو سے لائے تھے) تو انہیں اندر جانے سے روک دیا گیا۔ اس کے ساتھ ہی وہ ہزاروں بینر اور ٹینٹ جو بیئر بنانے والی مشہور کمپنی بڈوائزر (Budweiser) نے لگائے تھے، ختم کر دیئے گئے، حالانکہ یہ کمپنی ٹورنامنٹ کے سپانسروں میں شامل ہے اور ہر ٹورنامنٹ کے لئے ساڑھے سات کروڑ ڈالر دیتی ہے۔ ’’فیفا‘‘ کے منتظمین نے قطر کی حکومت کے سامنے سرِتسلیم خم کر لیا۔ قطر حکومت نے ان سے صرف اتنا ہی کہا کہ کیا تم دنیا کے کسی ملک میں کھلاڑیوں کو کوئی ایسی حرکت کرنے کی اجازت دو گے جو ان کے کلچر میں سب سے ناپسندیدہ سمجھی جاتی ہو۔ ’’فیفا‘‘ نے جواب دیا، نہیں، تو قطری حکام نے ان سے کہا کہ ہمارے ہاں شراب اور جسم فروشی دونوں ناپسندیدہ ترین افعال ہیں۔: ماشاء اللہ – قطر ہر ہر موقعے پر حیران کر رہا ہے ۔

مغرب کی وادیوں میں گونجی اذاں ہماری فٹ بال میچز ۔ اور آذان کی گونج ۔ یہ سب دنیا بھر میں نشر ہو گا

قطر میں فُٹبال ورلڈ کپ ہو رہا ہے ۔ افتتاحی تقریب کی تیاریاں ہوں، دعوتِ اسلام کے اسٹالز، علمائے کرام کی ڈیوٹیاں ہوں یا لباس و عریانیت کے حوالے سے احکامات، ایل جی بی ٹی یعنی ہم جنس پرستی کی تشہیر کے خلاف سخت کارروائی کا اعلان ہو یا وہاں پر نامور عالمی شہرت یافتہ اسکالر ڈاکٹر ذاکر نائیک کی خصوصی آمد ۔

دنیا بھر سے سینکڑوں علمائے کرام اور اسکالرز منگوائے گئے ہیں جو کہ مختلف زبانوں میں تبلیغ کا فریضہ سرانجام دیں گے ۔
دو ہزار مقامی علمائے کرام بھی فٹ ورلڈ کپ کی ڈیوٹی کریں گے ۔

ملک بھر کی مساجد کے مؤذن تبدیل کر کے دلکش آوازوں والے مؤذن مقرر کر دئیے گئے ہیں ۔

تمام مساجد کو اسلامی میوزیم طرز پر پیش کیا جائے گا جہاں کسی بھی وقت کوئی بھی آ کر معلومات لے سکے گا ۔

ملک بھر میں قرآنی آیات، احادیث اور تاریخ اسلامی کو نمایاں کر کے فلیکس اور بل بورڈز لگائے گئے ہیں ۔

قرآن مجید کے تراجم، مختلف زبانوں میں اسلامی تاریخ و سیرت کی کتب بانٹی جا رہی ہیں ۔
ہر اسٹیڈیم میں نماز کی نمایاں جگہ ہو گی ۔

ڈاکٹر ذاکر نائیک سمیت عالمی مبلغین کو مدعو کیا گیا ہے، جنکے لئے خصوصی سہولیات فراہم کی گئیں ہیں ۔

آپ تصور کریں کہ جب اہم ترین میچز میں آذان کی دلکش آواز ٹی وی چینلز اور سوشل میڈیا کے ذریعے مغرب کے گھر گھر میں گونجے گی، لاکھوں مغربی سیاحوں کی آمد ہو گی اور قطر نے اس ایونٹ کو اپنی اسلامی شناخت و ثقافت کی پہچان کے اظہار کا ذریعہ بنانے کا خوب خوب اہتمام کیا ہے ۔

ان شاءاللہ یہ اسپورٹس ایونٹ عالمِ اسلام کے ایک دلکش اور روشن چہرے کے اظہار کا ذریعہ بنے گا ۔

لاکھوں مغربی اس ایونٹ سے متاثر ہو کر جائیں گے ۔ ان شاء اللہ ایسی اطلاعات ہیں کہ بہت سے سیاح اسلامی اسٹالز پر دلچسپی لے رہے ہیں ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں