82

*جھنگ(جاوید اعوان سے)معمولی رنجش پر ظہور کا قتل، قاتل فرار۔ اتائی ڈاکٹر وقاص احمد نے گینگ کے ساتھ مل کر گھر میں گھس کے تشدد کیا جس کے بعد ظہور جان کی بازی ہار گیا۔بیوی کی مدعیت میں تھانہ صدر میں ایف آر درج، ملزمان کی تلاش جاری*

*جھنگ(جاوید اعوان سے)معمولی رنجش پر ظہور کا قتل، قاتل فرار۔ اتائی ڈاکٹر وقاص احمد نے گینگ کے ساتھ مل کر گھر میں گھس کے تشدد کیا جس کے بعد ظہور جان کی بازی ہار گیا۔بیوی کی مدعیت میں تھانہ صدر میں ایف آر درج، ملزمان کی تلاش جاری* تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز تھانہ صدر کے علاقے بستی نور محمد آباد نزد صوفی موڑ کے رہائشی ظہور کے گھر گھس کر وقاص احمدجٹ، بھولا ولد طوطا ارائیں، محمد اسد ولد عبدالحکیم بھوجوانہ، محمد عامر ولد ولد حق نواز بھوجوانہ اور چار سے پانچ کس نامعلوم افراد کے ساتھ مل کر ظہور اور اس کی بیوی ممتاز بی بی پر تشدد شروع کر دیا۔ تشدد سے ظہور مدہوش ہو کر گر گیا۔ وجہ عناد یہ تھی کہ کچھ دن پہلے اتائی ڈاکٹر کے پاس ظہور کا بیٹا دوائی لینے گیا تھا، جہاں اس کے ساتھ کسی وجہ سے سخت تلخ کلامی ہوئی۔ اسی عناد میں آ کر وقاص احمد نے اپنے گینگ کے ہمراہ گھر میں گھس کر تشدد کر کے قتل کر دیا۔ اتائی ڈاکر وقاص احمد جٹ صوفی موڑ پر ایک میڈیکل سٹور کی آڑ میں غیر قانونی پریکٹس کرتا ہے، اور پہلے بھی کئی بار مختلف لڑائیوں میں ملوث رہا ہے۔ جاگیر دار اور سیاسی پشت پناہی حاصل ہونے کی وجہ سے اتائی وقاص احمد جٹ اور اس کے تمام قریبی پہلے بھی اس طرح کے تشدد کے واقعات کرتے رہتے ہیں۔ لوگ ان کی برائی اور بدمعاشی کے سامنے بے بس ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ان کے خلاف کوئی بھی ایکشن لینے سے ڈرتا ہے۔ علاقے میں ابھی سے یہ ہوا پھیلا دی گئی ہے کہ جٹ برادری نے مقتول ظہور اور اس کے لواحقین کو انصاف نہیں ملنے دینا۔ ایم ایل سی میں مداخلت اور پیسوں کے ذریعے لواحقین کو خرید کر معاملہ رفع دفع کر دیا جائے گا۔ اور مجرم پھرسے یہاں ایسے ہی دندناتے پھریں گے۔گزشتہ برس اس کے قریبی عزیز پولیس مقابلے اور جعل سازی کی ایف آئی آر‘ز میں ملوث پائے گئے جنہیں بعد ازاں چالان کیا گیا تھا۔ پولیس نے مقتول ظہور کی بیوی کی مدعیت میں مقدمہ درج کر کے ملزمان کی تلاش شروع کر دی ھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں