22

محرم الحرام کی آمد ، سیکورٹی انتظامات سخت ، شرپسندوں کو 16 ایم پی او کے تحت نظر بند کرنے کا امکان، کالعدم تنظیموں کے سرگرم ارکان انڈر گراؤنڈ ہو گئے۔ ہوٹلوں مسافر خانوں میں افغان شہریوں پر خصوصی نظر رکھی جائے گی . ذرائع

محرم الحرام کی آمد ، سیکورٹی انتظامات سخت ، شرپسندوں کو 16 ایم پی او کے تحت نظر بند کرنے کا امکان، کالعدم تنظیموں کے سرگرم ارکان انڈر گراؤنڈ ہو گئے۔ ہوٹلوں مسافر خانوں میں افغان شہریوں پر خصوصی نظر رکھی جائے گی . ذرائع
جھنگ (محمد جاوید اعوان ) ذرائع سے معلوم ھوا ھے کہ محرم الحرام کے مقدس ایام شروع ھو رھے ہیں اور جھنگ کیونکہ پاکستان کا سب سے ذیادہ حساس ضلع ھے مذہبی فرقہ واریت کی ابتدا اسی شہر سے ھوئی تھی جب 1970 میں یوم 7 محرم کے جلوس پر چند شرپسندوں نے حملہ کر دیا تھا اور شیعہ ، سنی مسلمانوں میں خون خرابہ ھوا تھا جس میں کئی افراد جانبحق ھو گئے تھے اور بعد ازاں سپاہ صحابہ کے بانی مولانا حقنواز جھنگوی 1990 میں قتل کر دیئے گئے تو یہ مذہبی فسادات پورے ملک میں پھیل گئے تھے ۔جھنگ سمیت پورے پاکستان میں ان مذہبی فسادات کی وجہ سے اب تک سینکڑوں افراد قتل ہو چکے ہیں اور اربوں روپے کی املاک تباہ کی جا چکی ہیں ۔ اس لیے ہر محرم الحرام پر حکومت امن و امان کی بحالی کیلئے فوج سمیت دیگر اداروں کی خدمت حاصل کرتی ہے ۔کالعدم تنظیموں کے لوگوں کو نظر بند کر دیا جاتا ہے ۔شعلہ بیان ذاکرین اور مولویوں کا جھنگ میں داخلہ بند کر دیا جاتا ہے ۔دونوں اطراف کے لوگوں کو امن کمیٹی کے ذریعے جلوسوں اور مجالس کے پر امن انعقاد کا ذمہ دار بنایا جاتا ہے تا کہ مقدس ایام میں کوئی گڑ بڑ نہ ہو سکے ۔ ذرائع کے مطابق اس سال بھی حکومت سیکورٹی کے مزید سخت انتظامات کر رہی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں