35

کونج ۔۔۔۔۔۔۔ایک خوبصورت ، شرمیلا اور محبت کا پیکر آبی پرندہ ھے مزید تفصیلات کے لیے لنک پر کلک کریں

کونج ۔۔۔۔۔۔۔ایک خوبصورت ، شرمیلا اور محبت کا پیکر آبی پرندہ ھے مزید تفصیلات کے لیے لنک پر کلک کریں
جو سردیوں کے موسم میں ہمارے یہاں سربیا سے آتا ھے -اس کی گردن اور ٹانگیں لمبی قد تقریباً دو اڑھائی فٹ لمبا ۔۔۔۔۔اور وزن تقریباً دو تین کلو ہوتا ھے – اس کی ایک قسم کی آنکھوں کے پیچھے پر لٹکے ہوتے ہیں جو یوں لگتے ہیں جیسے زلفیں اسی وجہ سے اس کو دوشیزہ کونج بھی کہتے ہیں – کونج میں چند باتیں ایسی ہیں جو صرف درویشوں میں ہی نظر آتی ہیں عام لوگوں میں نہیں – مثلا فراق یار میں رونا ۔۔۔۔۔۔با جماعت اور قطار میں اڑنا ۔۔۔۔۔۔۔صرف اور صرف ایک بار ہی جوڑا بنانا اور پھر عمر بھر اسی دلبر کے ساتھ ایسا رشتہ بنانا کہ ۔۔۔۔۔۔۔
جیاں مراں گے کٹھے ۔۔۔۔ڈباں تراں گے کٹھے
جی ہاں اگر کونج کا نر مر جائے تو یہ ہجر میں گھل گھل کے جان دے دہتی ھے – دوسرا نر نہیں دیکھتی – اگر اپنے گروہ سے بھی بچھڑ جائے تو یوں نالہ و فغاں کرتی ھے کہ نہ صرف اہل دل کا سینہ چیر دیتی ھے بلکہ خود بھی جان تک وار دیتی ھے – اس کی سسکاریوں کے لیے صرف پنجابی زبان میں ہی صحیح لفظ ملتا ھے یعنی ۔۔۔۔۔۔کرلاٹ ۔۔۔۔۔۔۔جو بچھڑی کونج کی آواز کو کہتے ہیں – اور ایسی زاری جس سے یہ معلوم ھو کہ درد جان لیوا ھے صرف کونج کے مقدر میں ھے – یہی وجہ ھے کہ عاشق صادق اپنی زاری کو کونج سے تشبیہہ دیتے ہیں ……!
مینوں ہر ویلے تانگاں یار دیاں میں تاں بیٹهی کانگ اڈاراں
آپ ونجاں یا قاصد بهیجاں میڈا ہو گیا حال بیماراں
یار باہجھوں میرا جیون کوڑا میڈے اندر درد ہزاراں
غلام فریدا میں رواں ایویں جیویں وچهڑی کونج قطاراں
خواجہ غلام فرید
ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ
میاں محمد بخش ؒ کا ایک شعر ملاحظہ ھو :
درداں مار نمانا کیتا کونج وانگر کرلاندا
پُٹ پُٹ سٹدا وال سرے دے مول نہیں شرماندا
ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ
کونج کی سسکاریاں کانوں میں اتریں تو کھلا
اپنے ساتھی سے بچھڑنا کس قدر غمناک ھے
ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ ـــــــــ
کلی کونج نہ مار شکاری
تے جوڑا کر کے مار

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں