28

جھنگ (محمد جاوید اعوان) جھنگ میں محکمہ زراعت نے اپنے لالچ کے لیے یوریا کھاد کا مصنوعی بحران پیدا کردیا

جھنگ (محمد جاوید اعوان) جھنگ میں محکمہ زراعت نے اپنے لالچ کے لیے یوریا کھاد کا مصنوعی بحران پیدا کردیا اسسٹنٹ کمشنر کی جانب سے کھاد ڈیلروں کی دوکانوں پر ڈیوٹی پر تعینات پٹواریوں کو محکمہ زراعت کے آفیسرز نے ہڑتال کی دھمکی دیکر فارغ کروا دیا اور اب کسانوں کی بجائے من مرضی افراد کو کھاد دی جا رہی ہے سب ڈیلرز کی بوگس کاروائی کے ذریعے بھی محکمہ زراعت کے افسران کھاد مہنگے داموں فروخت کر رہے ہیں۔محکمہ زراعت کی سازش نے ضلعی انتظامیہ ڈی سی جھنگ اور اسسٹنٹ کمشنر جھنگ کی محنت پر پانی پھیر دیا تفصیلات کے مطابق جھنگ میں یوریا کھاد کی مصنوعی قلت کے باعث ڈپٹی کمشنر جھنگ نے ایکشن لیا اور اسسٹنٹ کمشنر جھنگ کو ہدایت جاری کی۔ جس پر اسسٹنٹ کمشنر جھنگ نے بہترین پالیسی بنائی اور نئے بھرتی کیمپپوٹراڈ نوجوان پٹواریوں کو کھاد ڈیلروں کی ہر شاپ پر ڈیوٹی لگا دی اور موقع پر ہی جو حقیقی کسان ھو اس کو کھاد دینا شروع کر دی جس پر محکمہ زراعت جو خود کھاد بلیک کرتا ہے اور انکے افسران بلیک ریٹ پر فروخت کرتے ہیں یہ دیکھا کہ اب ہماری تو دال نہیں گلنی ۔ھم کہاں سے اپنے من پسند بندوں کو کھاد دلوائیں گے اور محکمہ زراعت نے ڈیلروں کو کہا کہ آپ اس کو بے جا مداخت قرار دیکر سیل بند کر دیں جس پر ڈیلرز نے ایسا ہی کیا اور کھاد کی فروخت بند کر دی بعدازاں ڈیلرز مذاکرات کے لیے ڈی سی جھنگ کے پاس گئے اور کہا کہ ہم محکمہ زراعت کے ساتھ ملکر کر کنٹرول ریٹ پر کھاد دیں گے آپ پٹواریوں کو وہاں سے اٹھا دیں اور یہی ھوا جیسے ہی پٹواری ہٹے ڈیلرز نے محکمہ زراعت کے آفیسر ڈی ڈی او زراعت اختر چوھدری کی ملی بھگت سے من پسند افراد کو کھاد دینی شروع کر دی جبکہ محکمہ زراعت کے افسران نے سب ڈیلرز کا بھی ایک ڈرامہ رچایا ھوا ھے بوگس کاروائی ڈال کر کہ ہمارے مختلف علاقوں میں سب ڈیلرز ہیں جو سب ایک ڈرامہ ہے سینکڑوں کی تعداد میں کھاد بلیک کر کے فروخت کرتے ہیں وزیر اعلیٰ پنجاب چیف سیکرٹری پنجاب اور ڈپٹی کمشنر جھنگ نوٹس لیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں